Social Icons

Pages

شہریت کی تصدیق کیے بغیر تارکین وطن کو قبول نہیں کریں گے

پاکستان کا کہنا ہے کہ حکومت تارکینِ وطن کے معاملے پر یورپی یونین کے ساتھ معاہدے کے حق میں ہے لیکن بے دخل کیے گئے کسی بھی شخص کو بغیر تصدیق کے قبول نہیں کیا جائے۔ اتوار کو اسلام آباد میں پریس کانفرنس میں کہا کہ یونان سے ڈی پورٹ ہونے والے ان ہی پاکستانیوں کو جہاز سے اترنے کی اجازت دی گئی جن کے پاس پاکستانی شہریت سے متعلق دستاویزات تھیں۔

Thursday, April 7, 2016

Driving License In Abu Dhabi UAE

Much Asked Question for the Driver licence is how to get one, When i searched internet not much information is available on the topic,mostly are about Dubai ,so i decided to put some lines to make it easily understandable for people of Abu Dhabi

I got My Driving Licence in 3 months in First Test,So this can be the case with you too, Inshallah

Opening The File:

Before you go to EDC (Emirates Driving Company) in Mussafah Make sure following documents are ready
  1. Passport Copy
  2. Visa Copy
  3. Emirates ID card Copies
  4. NOC from your Employer 
  5. Keep 8 Photos
  6. 1000AED cash and some coins for photocopy machines
Take your documents with you early morning to Mussafah EDC and go to Traffic file opening  building (The Building Where lots of Private training cars are parked out side the gate) ,ask from any guard they will guide you to right direction,go to first floor and on right side there is one counter they will check your documents and issue one token for eye test, Wait near the eyesight test room on your number pay 25 AED to the person and get a certificate and a token for next procedure, Take this token and go to waiting room once your token number is called/Shown on screens go to appropriate counter,their they will take your photo and after checking all the documents again your file will be opened with traffic section after paying the fee,they will issue you an appointment sheet,keep this with you and proceed to EDC training building Next building behind the costumer parking. (Again Asking the Guards is a good Idea)

Booking Theory Classes:

In EDC training building you will need to go to first counter to take your booking token and wait (this can be very long sometime more than 4 hours) on your turn go to counter book the theory classes fee is approximately 850 AED. Ask them to give you suitable time evenings or morning they will accommodate you as per your needs and the available seats in classes.they will issue a Theory book and theory classes schedule sheet

Theory Classes:

Theory classes are conducted on first floor of same building and guard can guide you the way,make sure you reach the school 10 minutes in advance as the school is very strict on timings,on completion of theory classes you need to book theory test

Theory Test:

Book the Theory test from the same front desk and mostly you will get it after a few days,come on time on same first floor,the test will be mostly on 35 questions and very easy one,just read whole book at least once before you come to theory test,I passed with 35 marks out of 35 questions,after the test they will give you result in 45 minutes on the same floor,now if you have already your home country license (Must be a Card,not a book)  you can go for direct road test booking,and like me if you don't have any , then opt for PEP test,book this test only if you have prior experience but not the license in any country,this test will cost you some 65 AED,this will be booked from the same front desk.make sure all the bookings which require payment should be done before 5 PM as they close the cash register on 5 PM.

PEP Test:

PEP test is taken by EDC (Emirates Driving Company) Instructor in Parking Training Yard 2,which is near to central building, come 10 minutes early at least,go behind the booking counter a guard will guide you to transfer bus,the bus driver will stop at parking 2 and ask you to go to the office in yard,two instructors will sit with you and ask you drive as you know in the yard,don't touch any line,don't overtake,don't go very close to next vehicle, practice U-Turn on low width roads before you come for test,then based on your performance they will suggest how much practical training you require,if they give you AREA-2 you will pay 2350 AED approx and you have to book the Yard training from the same booking counter before 5 PM,very long wait is expected, so come early on working days, Friday is off, Yard is very busy so you may end up getting a booking after 3 months and there is nothing you can do to speed it up,

Practical Yard Training:

From Area 1 to Area 5 you will learn basics of parking,turning in short radius and how to cross junctions,roundabouts,signals with an instructor siting beside you all the time

Once the AREA 5 is completed your tower training will start from tower 2 to tower where you will repeat all the Area lesson but by your own,alone in the car,instructor will instruct you by wireless sets if they see anything wrong,be careful learn as much you can especially parking and leaving the parking is very important,don't drive to close or too fast although the driving speed is controlled,there will be a parking refresh class after Tower 5, Please note be careful if you make many mistakes or deadly one instructor will recommend you to go back to Area 1-5 again to train more with instructor in the car, which means more money and more time

Parking Test:

After Tower 5 and Parking refresh class you can book your Parking test or Yard test both are same,you can book this any time even in evening,come 10 minutes early test is taken in the same area where PEP test is taken Parking 2,their will be two chances for each type of parking I cleared in first try,if you follow the parking tips this both parallel or 90 degree (Bay parking) is very easy,after passing the parking test instructor will give you practical training passing certificate,which you can use to book a road test.

Road Test:

Before going to road test booking get a road training contract from any one of the instructors available on outside of the EDC,I prefered Mr Farman Sarwar 0529699046, he is very experienced and has a first try passing rate of 95% of his students,he will not give you useless lectures just ask you to drive and he will observe you very carefully and guide you all the way,call him and ask him to make a contract for you ,He will charge 50 AED,take this contract with EDC certificate attached to it to same building where you opened your File in first place,now instead of going to first floor go to same ground floor customer service counter a policeman will issue you a token and wait,on your turn take everything to the counter and they will book you road test and give you your training licence,keep this all the time during you road training,for first timer i suggest to take at least 10 classes from Mr Farman,he will make you perfect,and then have good sleep in prior night of test and pray in the morning,dress well,wear close shoes,look professional and greet the inspectors,i will write more once my test is done,wish you very good luck

Final Road Test:

The Day is here we talk much about, you need to go to Same building where you booked your test,go to counter they will assign you the bus you need to sit in,go out in the parking and pay around 25 AED to get a ticket for that bus ,lots of buses will be waiting for students came for tests, the number of buss will be written on your receipt sit in there, once all buses are full, the police inspectors will come with a list in hand they will call names one by one and confirm if you are present for the test, if your name is not called go out and ask any inspector about your name,they are very nice people and will help you to find correct bus, first student will take the test car one inspector in front and other in back seat will be the seating, pull out the car the bus will follow with remaining applicants, Drive very carefully keep your eyes scanning the area in front of you and on the back with the help of mirrors, inspectors may ask you to change lane,make a U-Turn or pull over for emergency,no matter what dont go above 60 if you are in Mussaffah Area, beware of heavy truck they usually dont care about you stay away from them their mistake can put your test results in danger, You will surprisingly find the inspectors very nice,gentle and kind,if they think you are good they can normally ignore small mistakes so dont panic if you made a mistake,dont make major but small is OK they will note how confidently you controlled the situation after making mistake. after two or three minutes driving the inspector will ask you to pull over,look mirrors,shoulder and everything you learned and select a safe place to pull over, use of indicators is very important as you are being tested for these, be confident not over confident as you will look irresponsible,

I wish you Good luck,Just remember inspectors are not there to Fail you,they are very qualified for their jobs, so dont pay anyone anything, everything is on merit. dont get fooled by thugs outside of school,if you think you are not confident for the test take more classes on Musafah roads with instructor, practice makes you perfect,extra one hundred paid to training instructor can save you thousands in case you fail the test just because you did not train well

Wish You Good Luck

Wednesday, March 2, 2016

Ali Jabran Writes on Gender Equality In Pakistan and Sharmeen Obaid chinoy

نا قابل اشاعت۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
علی جبران
:
کافی دن بعد جب ہاتھوں کی خارش برداشت نا ہوئی تو سوچا ہاتھوں کو ان کی خوراک دوں اور کچھ ایسا لکھوں جو ناقابل اشاعت ہو۔۔۔
تو بس ۔۔۔ لیپ ٹاپ لیا اور شروع کردیا۔۔۔۔
مضوع آپ کا جانا پہچانا۔۔۔ آپ کی اپنی شرمین آپا المعاروف "کینیڈین مائی " ۔۔۔
پہلی بات جو بڑی دلچسپ بھی ہے وہ یہ کہ پاکستان سے باہر رہنے والوں کو پاکستان سے ناجانے کیوں اتنی محبت ہوتی ہے۔۔۔
لندن ، کینیڈا، سعودیہ، ایران، افغانستان، امریکا، برطانیہ ، روس، سب کے سب حیرت انگیز طور پر پاکستان میں امن و امان اور سکون دیکھنا چاہتےہہیں،
لندن والے اتنا سکون چاہتے ہیں کے سب کچھ بند کروا دیتے ہیں یا کبھی اتنا خیال رکھتے ہیں کہ عوام کے راشن پانی کی فکر میں لگ جاتے ہیں
کینیڈا والی سرکار ہر سال لائیو لوگوں کا ہجوم دیکھنے آجاتے ہیں۔۔ اور ایک دو ماہ لوگوں کو گھروں سے باہر نکال کر خود انٹرٹین ہو کر کینیڈا روانا ہوجاتے ہیں۔۔۔۔
بات لمبی نا ہوجائے اس لئے باقی ممالک کی پاکستان سے ہمدردیاں آپ کی "لبرل اور مذہبی" سوچ پر چھوڑ کر آگے بڑھتا ہوں۔۔۔
شرمین میڈم کاتعلق بھی کینیڈا سے ہے ظاہر ہے وہ کیسے اس نیک کام میں پیچھے رہ سکتی تھیں؟ اٹھایا کیمرا لیا گورے کو اور آگئیں پاکستان!
دنیا میں عورتوں پر سب زیادہ تشدد انھیں پاکستان میں دکھا اور یہ مسیحا بن کر ڈائریکٹر کے روپ میں پاکستان آگئیں
انڈیا ، بنگلہ دیش اور میانمار میں تو کبھی کچھ ایسا آج تک ہوا ہی نہیں ہے۔۔۔ نا ہی یہ ممالک ایسے گندے کام میں آگے ہیں۔۔۔
اگر آپ کو میرے جھوٹ پر یقین نہ آئے تو انٹرنیٹ پر میرا جھوٹ آپ پکڑ سکتے ہیں۔۔۔
ایسا نہیں کہ تیزاپ سے حملے پر فلم صرف پاکستان میں بنائی گئی۔۔۔ انڈیا میں اس موضوع پر کافی فلمیں بن چکی ہیں مگر " آسکر" تو صرف کینیڈین شہری پاکستانی نژاد شرمین کو ہی ملنا تھا،
مزید آگے چلتے ہیں۔۔۔ ان کی ہمدردی یہاں کم نہیں ہوئی۔۔۔
ان کی دوسری فلم کے انتظار کے دوران ایک لمبا وقفہ آیا۔ 8 مارچ 2012 سے 28 اکتوبر 2015 تک دوسری فلم بنانے میں پاکستان میں کیا کچھ ہوا س کی ایک جھلک دیکھئے؟
1
"علاقے میں ایک ایونٹ ہو رہا ہے، اور وہاں کھانا، پینا، ٹرینر، ایوارڈ اور دیگر انعمات دئے جائیں گے" اس نے کہا
"کیوں بھائی ایسا کیا ہو رہا ہے؟" میرے پاس حیرت کے سوا اور کچھ نہیں تھا،
"وہ فلاں این جی او Gander Equlalityپر پراگرام کروا رہی ہے اس لئے"۔۔۔
2
"یار دعا کرنا میرا نام آجائے" اس کی آنکھوں میں ایک امید تھی
"کیوں بھائی ؟ کہاں نام آجائے؟ خیریت؟" میں نے پوچھا
"وہ فلاں این جی او امریکا میں صحآفت کا فری کورس کروا رہی ہے اس کا انٹر ویو یے"اس نے ٹائی کی ناٹ درست کرتے ہوئے کہا
"چلو ٹھیک ہے جاؤ" میں نے کہا
تین گھنٹے بعد۔۔۔
"کیا ہوا؟ کنفیوز کیوں ہو؟ انٹر ویو کیسا ہوا؟" میں نے اس کے چہرا دیکھ کر سوال کیا
" کچھ نہیں انٹریو سمجھ نہیں آیا میرے۔۔۔ بار بار سوال کر رہے تھے کہ Gander Equality کے بارے میں آپ کی رائے کیا ہے؟ آپ نے اس پر کیا کام کیا ہے۔۔۔؟ آپ اس پر ہمارے لئے کیا کر سکتے ہیں؟
3
"کل تین بجے پریس کلب آجاؤ ۔۔۔ ایک ورک شاپ ہے ، جس کے پیپر میں اضافی نمبر ملیں گے" سر کا فون آیا
ٹھیک 3 بجے میں وہاں مجود تھا۔۔۔ آخر نمبروں کا سوال تھا
"آج کا موضوع Gender Equalityپر ہے" سر نے پراجیکٹر آن کرتے ہوئے کہا۔۔۔
4
" آج کلاس میں ایک ACTIVITYہوگی، جس میں ہم ان خبروں کو علیحدہ کریں گے جس میں Gander Equality پر بات کی گئی ہو۔۔۔ اس کے بھی اضافی نمبر پرچے میں ملیں گے"
5
"فلاں کا ماننا ہے لڑکیاں دن سے لے کر رات تک شائن کر سکتی ہیں، اس لئے آپ ہمارا شیمپو لیں، جب لڑکے رات بھر کام کر سکتے ہیں تو لڑکیاں کیوں نہیں؟" اشتہار
یہ اور اس جیسا بہت کچھ عجیب و غریب اس دوران ہوتا رہا۔۔۔۔
پھر جناب 28اکتوپر 2015 کو شرمین میڈم نے ایک فلم ریلیز کی۔۔۔ جس پر انھیں ایک اور آسکر مل گیا۔۔۔
آسکر ملنے سے کچھ دن قبل پنجب اسمبلی میں حقوق نسواں بل پاس ہوا۔۔۔ جو آج کل میڈیا کی زینت بنا ہوا ہے
میری سمجھ نہیں آرہا تھا کہ مولویوں کو بھی سکون نہیں ہےفورا اس بل کے مخالف کھڑے ہوگئے اور لبرلز بھی میدان میں آگئے۔۔۔ دماغ اسی میں الجھا ہوا تھا کہ
ایک بریکنگ نیوز آئی آسکر شرمین پھر سے جیت گئیں۔۔۔
یہ کوئی بریکنگ میرے لئے نہیں تھی کیوں کہ سب کو شرمین کی "ہمدردی" پر پورا یقین تھا۔۔۔۔
لیکن ! میرے لئے بریکنگ اس وقت ہوئی جب شرمین نے اسٹیج پر ایوارڈ وصول کرتے ہوئے جملے کہے۔۔۔
"This week the Pakistani prime minister has said that he will change the law on honour killing after watching this film. That is the power of film”
اس وقت میرے دماغ کی ساری الجھنیں سلجھ گئیں۔۔۔۔۔ اور این جی اوز کے Gander Equalityسے لیکر حقوق نسواں بل پاس ہوکر قانون میں تبدیلی تک کی تمام کہانی شرمین کے جملے سے سمجھ آگئی۔۔۔۔۔
شکریہ شرمین۔۔۔۔
شکریہ این جی اوز۔۔۔۔
شکریہ نوجوانوں۔۔۔
اور ہاں۔۔۔ آپ کو کیسے بھول جاؤں؟
شکریہ راحیل شریف۔۔۔ smile emoticon
~ علی جبران

Tuesday, February 23, 2016

Pathankot attack: phone number traced to Jaish office, says Aziz

NEW DELHI: Adviser to Prime Minister on Foreign Affairs Sartaj Aziz has revealed that one of the mobile phone numbers linked to those who attacked the Pathankot airbase had been traced to the Jaish-e-Mohammed group’s headquarters in Bahawalpur.
Mr Aziz called the lodging of the FIR in connection with the Pathankot assault a “logical and positive step” in bringing the perpetrators to justice.
JeM chief Masood Azhar has been named by India as the mastermind of the airbase attack and Mr Aziz confirmed media reports that he (Azhar) had been under “protective custody” since Jan 14.
The adviser told India Today news channel it was for India to decide on dates for foreign secretary-level talks, postponed in the wake of the airbase attack.
He said a Special Investigation Team (SIT) from Pakistan may visit Pathankot in the first few days of March to probe the attack and that his country was pursuing the investigation seriously.
Speaking to Karan Thapar of Headlines Today, Mr Aziz said that Azhar, along with a few other operatives of JeM, had been kept under protective custody and that some of the JeM’s premises had been sealed. He said action would follow against Azhar and others the moment evidence became available.
Mr Aziz said the FIR filed four days back in the Pathankot attack case had created legal basis for a Special Investigation Team of Pakistan to visit India to collect evidence.
He said India had agreed to the SIT visit.
Asked about Indian Defence Minister Manohar Parrikar’s comment that SIT would not be allowed to go inside the airbase in Pathankot, Mr Aziz said access to crime scene always helped investigators.
On holding of the foreign secretary-level talks between the two countries, Aziz said the “ball is in India’s court”.
“The answer to it lies entirely with India,” he said, adding he hoped Prime Ministers Narendra Modi and Nawaz Sharif would meet on the sidelines of the Nuclear Security Summit in Washington next month.
Published in Dawn, February 23rd, 2016

The Only Democratic Party In Pakistan (Director Media Jamaat E Islami)

جماعت اسلامی کی داخلی جمہوریت، پلڈاٹ رپورٹ اور صحافیوں کے تبصرے
پلڈاٹ نے پاکستان کی 8 بڑی سیاسی جماعتوں کی داخلی جمہوریت کے بارے میں رپورٹ پیش کی ہے اور اس میں جماعت اسلامی کو پہلے نمبر پر قرار دیا ہے ۔ یاد رہے کہ گزشتہ سال بھی جماعت اسلامی ہی پہلے نمبر پر رہی تھی۔ پلڈاٹ اس وقت پاکستان میں جمہوریت، پالیمانی نظام اور انتخابات کے جائزے کے حوالے سے سب سے معتبر اور غیرجانبدار ادارہ ہے اور اس کی رپورٹس اپنی اسی غیرجانبداری کی وجہ سے ہر دائرے میں قبولیت کا درجہ حاصل کرتی ہیں۔ اگرچہ پلڈاٹ رپورٹ میں جماعت پہلے نمبر پر رہی ہے مگر یہ ایک پہلے سے معلوم حقیقت ہے، ہر ذی شعور پاکستانی اس بارے میں جانتا ہے۔ جماعت بھلے سیاسی میدان میں بوجوہ کامیاب نہیں ہے اور اسے وہ عوامی مقبولیت حاصل نہیں ہو سکی جو کہ اپنی خوبیوں کی وجہ سے ہونی چاہیے مگر اپنی تنظیم، داخلی جمہوریت، امانت و دیانت، احتسابی نظام اور خدمت کی وجہ سے دوسری جماعتوں میں نہ صرف ممتاز ہے بلکہ ان حوالوں سے بطور پارٹی دور تک اس کا کوئی مقابل نہیں ہے۔
پلڈاٹ جیسا ادارہ ایسی رپورٹ پیش کرے اور ایسی رپورٹ مسلسل آنے لگیں تو بھلے سیاسی مقبولیت حاصل نہ ہو مگر پڑھے لکھے طبقے بالخصوص نوجوانوں اور انٹیلی جنیشیا میں ایک تاثر ضرور ابھرتا اور متبادل ضرور ذہن میں آتا ہے اور دیگر کئی عوامل اس لے کو آگے بڑھا سکتے ہیں۔ میرے خیال میں یہی وہ چیز ہے جو ہمارے بعض کرم فرمائوں سے ہضم نہیں ہوتی۔ شاید کوئی ان دیکھا یا انجانا خوف ہے کہ وہ جماعت اچھائی کو بھی برائی بنا کر پیش کرنے پر مجبور ہیں۔ کل یہ رپورٹ میڈیا میں آئی اور رات مختلف ٹی وی چینلز پر اس حوالے سے تبصرے ہوئے۔ ایک معروف ٹی وی چینل پر دو معروف اینکرز اس رپورٹ پر تبصرہ کر رہے تھے اور دونوں کا کہنا یہ تھا کہ جماعت کو پہلے نمبر پر قرار دیتے ہوئے پلڈاٹ سے ضرور کوئی غلطی ہوئی ہے، ان کا دل تو اس رپورٹ کو نہیں مان رہا۔ بنیادی اعتراض یہ تھا کہ جماعت میں تو امیدواران کا ہی معلوم نہیں ہوتا کہ کون امیدوار ہے اور الیکشن لڑ رہا ہے۔ اعتراض سے ہی اس کی حقیقت واضح ہے اور میرا نہیں خیال کہ اس سے کوئی بودا اور بے معنی اعتراض بھی ہو سکتا ہے، اس پائے کے صحافیوں سے اس بات کی توقع نہیں کی جا سکتی کہ اتنی بنیادی بات کو نہ سمجھتے ہوں۔ بھلا یہ کسی انتخاب میں ہوتا ہے کہ امیدواران ہی نہ ہوں اور انتخاب بھی ہو جائے؟ پھر کیا جماعت کا ابھی حال ہی میں امارت کا انتخاب نہیں ہوا اور اس میں نام معلوم نہیں تھے؟ کیا انھی ناموں میں سے ایک نئے امیر کا انتخاب نہیں ہوا؟ اور کیا ان پائے کے صحافیوں کو اس کی خبر نہیں ہو سکی۔ کیا یہ معلوم حقیقت نہیں ہے کہ جماعت میں موروثیت نہیں ہے، یہ دیگر تمام پارٹیوں کی طرح کوئی خاندانی جماعت نہیں ہے اور اس کے پانچوں امرا مختلف جگہوں سے منتخب ہوئے، آنے والے کا گزشتہ کیا پچھلے کسی امیر سے بھی کوئی رشتہ داری کیا علاقے کا بھی تعلق نہیں ہے۔ اس معلوم حقیقت کے ہوتے ہوئے بھی بھلا کوئی ایسا اعتراض کر سکتا ہے؟
جماعت قیام سے لے کر اب تک اپنے لکھے دستور کی پابند ہے، انتخاب امیر کا واضح طریق کار اس میں لکھا ہوا موجود ہے۔ ملک میں آمریت ہو یا جمہوریت ، حالات سازگار ہوں یا نہیں، جماعت کی تنظیم اور انتخابی نظام ایک لمحے کے لیے متاثر ہوا نہ کبھی اس سے انحراف ہوا ہے۔ مرکزی مجلس شوری انتخاب امیر و مجلس شوری کے لیے ایک مرکزی چیف الیکشن کمشنر اور ان کے ساتھ صوبائی الیکشن کمیشن کا تقرر کرتی ہے۔ تمام ارکان الیکٹورل کالج کی حیثیت رکھتے ہیں۔ ان تمام ارکان (اس وقت 35 ہزار سے زائد) کو بیلٹ پیپر جاری ہوتا ہے اور وہ اپنی رائے کا اظہار کرتے ہیں، امیر اور اپنی مجلس شوری کا انتخاب کرتے ہیں۔ یہی عمل صوبے، اضلاع ، تحصیل اور یونین کونسل میں ہوتا ہے اور ہر سطح کی قیادت منتخب ہو کر سامنے آتی ہے۔ مرکزی امارت سمیت ہر سطح کے انتخاب میں 3 نام معلوم ہوتےہیں، متعلقہ شوری ان ناموں کو تجویر کرتی ہے۔ مگر کوئی رکن ان تین کے علاوہ بھی کسی رکن جماعت کو ووٹ دینا چاہے تو دے سکتا ہے۔ دستور اس کی اجازت دیتا ہے۔ اس طرح ہر رکن ایک لحاظ سے امیر بننے کا اہل ہے اور اسے ووٹ دیا جا سکتا ہے۔ ایک جماعت کیا، اس کی قائم کردہ ہر برادر تنظیم میں یہ عمل ہوتا ہے؟ طلبہ تک اپنی قیادت کا انتخاب خود کرتے ہیں، اور اس میں کسی قسم کی کوئی مداخلت نہیں ہوتی۔ کیا کسی ایک بھی دوسری جماعت میں ایسا انتخابی نظام اور کوئی ایسی مثال موجود ہے اور کوئی خاندان کے خلاف جرات کا ارتکاب کر دے تو اس پارٹی میں رہ سکتا ہے؟ اور کیا اتنے بڑے صحافی اس حقیقت سے بےخبر ہیں؟ ایک اور امتیازی وصف اس نظام کا یہ ہے کہ تمام امرا کی مدت مقرر ہے، امیر جماعت 5 سال ، امیر صوبہ 3 سال اور امیر ضلع 2 سال، اس میں پھر امیر صوبہ اور امیر ضلع کے لیے قید ہے کہ وہ دو دفعہ سے زیادہ منتخب نہیں کی جا سکتے ؟ کیا یہ پابندی کسی دوسری جماعت میں موجود ہے؟
جماعت کے مقابل عوامی نیشنل پارٹی کی مثال دی گئی اور کہا یہ گیا کہ جماعت سے تو زیادہ اس میں جمہوریت ہے۔ سبحان اللہ کیا کہنے۔ مثال ہی اپنی حقیقت بیان کر رہی ہے۔ مزید اس پر کیا کہا جائے۔ باپ، بیٹا، بیوی اور پھر بیٹا، یہ ہے وہ مثال جسے جماعت اور اس کے شفاف نظام کے مقابلے میں پیش کیا گیا ہے۔ مرکز میں یہ حال ہے تو نچلی سطح پر جمہوریت کا کیا حال ہوگا؟ پھر یہ کہا گیا کہ کیا پلڈاٹ نے جماعت اسلامی کے انتخابی عمل کا جائزہ لیا ہے جو پہلے نمبر پر قرار دیا ہے؟ یہ اعتراض بھی تب ہو سکتا تھا جب دیگر 7 جماعتوں کے نظام کا جائزہ لیا جاتا اور جماعت اس جائزے میں رہ جاتی۔ ظاہر ہے کہ کسی پارٹی کے انتخابی عمل کا جائزہ نہیں لیا گیا کہ بیلٹ پیپر گنے جا رہے ہوں اور پلڈاٹ کے نمائندے وہاں موجود ہوں۔ پوائنٹس کے ایک نظام اور جائزے کے مطابق انھوں نے پوائنٹس دیے جس میں جماعت کو پہلے نمبر پر پایا۔ ویسے جماعت کے انتخابی نظام کا تو کسی وقت بھی جائزہ لیا جا سکتا ہے مگر مقابل جماعتوں میں تو سرے الیکشن ہی نہیں ہوتا تو کس چیز کا جائزہ لیں گے؟
جماعت سیاسی طور پرمقبول نہیں، اس میں دیگر ہزار خامیاں ہوسکتی ہیں، قیادت سے پالیسی تک کوئی بھی اعتراض وارد ہوسکتا ہے اور بہانے بہانے سے میڈیا میں کھلے طریقے سے اس کا اظہار بھی ہوتا ہے مگر کوئی خوبی نظر آئے اور پلڈاٹ جیسا معتبر ادارہ پیش کرے تو اسے بھی اپنی قلبی و ذہنی وابستگی اور نظریاتی مخالفت کو بالائے طاق رکھتے ہوئے کھلے دل سے تسلیم کرنا چاہیے۔ کوئی بڑا صحافی ہو تو یہ بات اور بھی ضروری ہے، ساتھ میں غیرجانبداری پر اصرار ہو تو اور زیادہ ضروری۔

Wednesday, September 18, 2013

مخلوط نظامِ تعلیم: بچیوں کی تعلیم پر منفی اثر

ہماری حکومت بھی عوام کو ایسے ایسے خواب دکھاتی ہے کہ اگر اسکی ہربات پر یقین کر لیا جائے تو محسوس ہو گا کہ پاکستان چند ہی دنوں میں جنت بن جائے گا۔

اب پنجاب حکومت کو ہی لیجئیے چودہ اگست کو ایوان اقبال میں ہونے والی ایک چکا چوند تقریب میں خادم اعلیٰ نے صوبے میں سو فیصد خواندگی کا ہدف حاصل کرنے کے لیے مہم کا آغاز کردیا۔واہ ! سننے میں تو یہ ایک ایسا منصوبہ ہے کہ حکومت کے نقاد بھی اس کی مخالفت نہ کرپائے لیکن کوئی پوچھے یہ ہدف حاصل کیسے ہوگا۔
اس گتھی کو سلجھانے میں تو شاید بہت وقت لگے لیکن حال ہی میں ضلع گجرات کی یونین کونسل ماچھی وال کے گاؤں چھوکر میں ایک ایسا واقعہ پیش آیا جس سے لگتا ہے کہ حکومت کی پالیسی کے باعث کم از کم بچیوں کی خواندگی میں تو کمی ہی آئے گی۔

چھوکر میں لڑکے اور لڑکیوں کے دو پرائمری سکول تھے۔ حال ہی میں ریشنلائزیشن پالیسی کے تحت یہاں دونوں سکولوں کو ضم کر دیا گیا۔ نتجہ یہ نکلا کہ والدین نے اپنی بچیوں کو سکول بھیجنا ہی بند کردیا ہے۔
محمد عباس چھوکر کے رہائشی ہیں ان کی سائیکلوں کو پنکچر لگانے کی دکان ہے۔ عباس کہتے ہیں کہ’ آپ کو پتہ ہے آج کل ماحول کیسا ہے۔ اب انھوں نے بچیوں اور لڑکوں کا ایک ہی سکول کردیا ہے اور یہ ہم برداشت نہیں کرتے۔ اس لیے میں تو بچیوں کو سرکاری سکول نہیں بھیج رہا۔ دو بچیوں کو پرائیویٹ سکول داخل کروایا ہے۔ اس سے زیادہ خرچہ اٹھانے کی ہمت نہیں، اس لیے دو بچیاں مدرسے میں ڈال دی ہیں۔‘

حکومت کے نزدیک تو ریشنلائزیشن پالیسی وسائل کے بہتر استعمال کا نام ہے۔ پنجاب کے وزیرِتعلیم رانا مشہود احمد خان کہتے ہیں۔

’ایک پرائمری سکول پر حکومت کا بہت زیادہ خرچہ ہوتاہے۔ ایک ہیڈ ماسٹر کو ستر سے اسی ہزار روپے تنخواہ دی جارہی ہے اور کم سے کم ایک سکول کو چلانے کے لیے حکومت کو ماہانہ چار پانچ لاکھ روپے خرچ کرنا پڑتے ہیں تو اگر کسی علاقے میں بچوں کی تعداد ہی کم ہے تو اس کے بارے میں فیصلہ ہوا کہ وہاں اساتذہ، سکولوں اور وسائل کو اکٹھا کردیا جائے۔‘

اکنامک سروے آف پاکستان کے مطابق ریشنلائزیشن پالیسی کے تحت پاکستان میں سنہ 2006 سے 2012 کے درمیان پرائمری سکولوں کی تعداد میں تقریباً پانچ ہزار تک کی کمی کی گئی۔

چھوکر کے نمبردار غلام رسول کے مطابق گاؤں میں لڑکے اور لڑکیوں کے الگ الگ سکول ایک عرصے سے موجود تھے اور لوگ بہت شوق سے اپنی بچیوں کو تعلیم حاصل کرنے کے لیے پرائمری سکول بھیجتے تھے تاہم مخلوط تعلیم مقامی لوگوں کے لیے قابل قبول نہیں۔
’ہمارے گاؤں میں بچیوں کے سکول کی عمارت بھی موجود ہے اور لڑکوں کے سکول کی بھی۔ ہمیں سمجھ نہیں آتا کہ ان سکولوں کو ضم کیوں کیا گیا۔ ہمارے گاؤں کا ماحول بہت مذہبی ہے۔ اس لیے لوگ اس بات پر آمادہ نہیں کہ پرائمری سطح پر بھی اپنی لڑکیوں کو لڑکوں کے ساتھ پڑھائیں۔ اس وجہ سے کچھ لوگوں نے تو بچیاں سکول سے اٹھا لیں ہیں اور کچھ اٹھانا چاہتے ہیں۔‘

چھوکر کے رہائشیوں کے مطابق یہاں ایک سو تیس بچیاں پرائمری سکول میں زیرِتعلیم تھیں۔ گجرات کی ڈی سی او آصف لودھی کا کہنا ہے کہ کچھ والدین کی جانب سے مخلوط تعلیم پر اعتراضات سامنے آئے ہیں۔

’ ایسے چند واقعات ہمارے نوٹس میں آئے ہیں اور ہم انھیں سلجھانے کی کوشیش کر رہے ہیں۔ کچھ والدین نے ہم سے رابطہ بھی کیا ہے ۔ تعلیمی اعتبار سے گجرات میں لوگوں کا رویہ بہت بہتر ہے۔فی الحال یہ اتنا سنگین مسئلہ نہیں ہے۔ ہم نے محکمہ تعلیم کے ساتھ بھی یہ معاملہ اٹھایا ہے کیونکہ تعلیمی پالیسی ضلعی حکومت کے دائرہ اختیار سے باہر ہے۔‘

خواتین کی تعلیم پاکستان میں ایک حساس معاملہ ہے۔ صرف انتہا پسندوں کے حملے ہی نہیں بلکہ کبھی کبھی تو سماجی رکاوٹیں اور معاشرتی مسائل بھی خواتین کو تعلیم کے حق سے محروم کردیتی ہیں۔

سکولوں کے ادغام سے صرف مخلوط تعلیم کا مسئلہ ہی پیدا نہیں ہوا بلکہ کئی علاقوں میں بچیوں کے گھروں سے سکولوں کا فاصلہ بھی بڑھ گیا ہے۔

حال ہی میں یونیسکو ادارہ برائے شماریات کی جانب سے شائع کی گئی رپورٹ کے مطابق سنہ 2005 سے 2009 کے دوران پاکستان میں ناخواندہ بچیوں کی تعداد میں 10 لاکھ کا اضافہ ہوا۔

پنجاب حکومت نے سو فیصد خواندگی کے لیے صوبے میں مہم کا آغاز تو کردیا ہے تاہم ریشنلائزیشن کے نام پر سکولوں کی تعداد میں کمی سے بچیوں کی شرح خواندگی میں اضافہ تو نہیں کمی ہوتی ہی دکھائی دے رہی ہے۔

VC Punjab Mujahid Kamran University Scandal with Student Girls


 

Sample text

Sample Text

Sample Text